Nazar Fareb-E-Kaza Kha Gai To Kya Hoga

written by Ehsan Danish

Nazar Fareb-E-Kaza Kha Gai To Kya Hoga

— Ehsan Danish

نظر فریبِ قضا کھا گئی تو کیا ہو گا
حیات موت سے ٹکرا گئی تو کیا ہو گا

نئی سحر کے بہت لوگ منتظر ہیں مگر
نئی سحر بھی کجلا گئی تو کیا ہو گا

نہ رہنماؤں کی مجلس میں لے چلو مجھے
میں بے ادب ہوں، ہنسی آ گئی تو کیا ہو گا

غمِ حیات سے بے شک ہے خود کشی آسان
مگر جو موت بھی شرما گئی تو کیا ہو گا

شبابِ لالہ و گل کو پکارنے والو
خزاں سرِشت بہار آ گئی تو کیا ہو گا

یہ فکر کر کے اس آسودگی کے دھوکے میں
تیری خودی کو بھی موت آ گئی تو کیا ہوگا

خوشی چِھنی ہے تو غم کا بھی اعتماد نہ کر
جو روح غم سے بھی اکتا گئی تو کیا ہو گا

Poem of the Day

Epistle To William Simson

Robert Burns

I GAT your letter, winsome Willie;
Wi' gratefu' heart I thank you brawlie;
Tho' I maun say't, I wad be silly,
And unco vain,
Should I believe, my coaxin billie
Your flatterin strain.

Read Full Poem

Poet of the Day

William Roscoe

He was born in Liverpool, where his father, a market gardener, kept a public house called the Bowling Green at Mount Pleasant. Roscoe left school at the age of twelve, having learned all that his schoolmaster could teach. He assisted...

Read Full Biography